Raiwind Jor 2015 Bayans Listen & Download

Arrow up
Arrow down

+

17 - جنوری - 2018
۲۸ - ربيع الثاني - ۱۴۳۹

سوال

(الف) کیاانجکشن لگانے سے روزہ ٹوٹ جاتاہے اگرنہیں ٹوٹتاتواس کی دلیل کیاہے۔

(ب) کیاڈرپ لگانے سے روزہ ٹوٹ جاتاہے۔

(ج) کیاطاقت کاانجکشن یاڈرپ روزہ کی حالت میں لگواناجائزہے


جواب:

(الف، ب،ج) روزہ ٹوٹنے کے لئے کسی چیزکاجوف بطن یاجوف دماغ تک منفذاصلی منہ، ناک وغیرہ کے ذریعے سے پہنچناضروری ہے جبکہ انجکشن اورڈرپ کے ذریعے جودوابدن میں پہنچتی ہے وہ بذریعہ منفذاصلی نہیں پہنچتی، بلکہ رگوں اورمسامات کے ذریعے سے پہنچتی ہے جومفسدصوم نہیں۔

لہٰذاانجکشن اورڈرپ خواہ طاقت کے لئے ہویاکسی بیماری کودورکرنے کے لئے ان سے روزہ نہیں ٹوٹتا، البتہ بلاضرورت طاقت کاانجکشن اورڈرپ کااستعمال کرنامناسب نہیں (ماخذہ امدادالمفتین ۷۸۸)


حوالہ:

وفی الہندیۃ: وفی دواء الجائفۃ والآمۃ اکثرالمشایخؒ علی ان العبرۃ للوصول الٰی الجوف والدماغ، لالکونہ رطباً اویابساً حتی اذاعلم ان الیابس وصل، یفسدصومہ، ولوعلم انّ الرّطب لم یصل، لم یفسدہکذافی العنایۃ (۱ص۲۰۴) وفی الدرالمختار: (اواحتقن اوسعّط) فی انفہ شیئاً (أواقطرفی اذنہ دھناأوراوٰی جائفۃ أوآمۃ) فوصل الدواء حقیقۃ الٰی جوفہ ودماغہ قال العلامۃ الشامیؒ تحت قولہ (فوصل الدواء حقیقۃ) اشارالٰی ان ماوقع فی ظاہرالروایۃ من تقییدالافسادبالدواء الرطب منبی علی العادۃ من انہ یصل، والافالمعبترحقیقۃ الوصول حتی لوعلم وصول الیالبس افسداوعدم وصول الطریّ لم یفسد۲/۴۰۲۔

comments powered by Disqus

Go to top
JSN Boot template designed by JoomlaShine.com