Raiwind Jor 2015 Bayans Listen & Download

Arrow up
Arrow down

+

20 - جنوری - 2018
۲ - جمادى الأولى - ۱۴۳۹

سوال:

مختلف ادویات سازکمپنیاں اپنی ادویات کی فروخت کوبڑھانے کیلئے ڈاکٹرحضرات کوSample (ادویات کے نمونے) دیتے ہیں اوریہ Sample دینے کے دومقاصدہوتے ہیں۔

(۱) اپنی دوائی کاتعارف کروانا۔ (۲) ڈاکٹرکوخوش کرنے کیلئے تاکہ وہ ہماری دوائی لکھے توکیا

(الف) یہ Sample اپنی ذات کیلئے استعمال کرناجائزہے ڈاکٹرکیلئے؟

(ب) یایہ Sample کسی غریب مریض کودیدیناجائزہے؟ Sample لے کرڈاکٹران کی ادویات لکھنے پرمجبورنہیں ہوتا


جواب:

مسؤلہ صورت میں کمپنی کی طرف سے جودوائیں دی جاتی ہیں وہ اگرڈاکٹرکومالک اورقابض بناکردی جاتی ہیں توان دواؤں کامالک ڈاکٹرہے اوراس کیلئے ان کااستعمال جائزہے۔ اوراگرڈاکٹرکومالک بناکرنہ دی جاتی ہوں بلکہ غریب مریضوں کیلئے دی جاتی ہوں توپھران کااستعمال ڈاکٹرکیلئے جائزنہیں بلکہ مریضوں کودیناڈاکٹرکیلئے ضروری ہے


حوالہ:


Fatwa No. fno81.404

View Original Fatwa | Download Original Fatwa

comments powered by Disqus

Go to top
JSN Boot template designed by JoomlaShine.com