Raiwind Jor 2015 Bayans Listen & Download

Arrow up
Arrow down

+

17 - دسمبر - 2017
۲۷ - ربيع الأول - ۱۴۳۹

سوال

۔ کیانامحرم لڑکی کوسلام کرناجائزہے؟
کیانامحرم لڑکی کے سلام کاجواب دیناچاہئے؟


جواب:

نامحرم عورت کوسلام کرنے یاسلام کاجواب دینے میں کچھ تفصیل ہے۔ وہ یہ کہ اگروہ عورت اتنی بوڑھی ہوکہ قابلِ شہوت نہ ہوتواس کوسلام کرنااورسلام کاجواب دینادرست ہے۔ اوراگرنامحرم عورت جوان ہوتواس کے سلام کاجواب آہستہ سے دل میں دیناچاہئے اورخودنامحرم عورت کوبلاضرورت سلام کرنادرست نہیں۔


حوالہ:

وفی الشامیۃ: (قولہ الفتیات) جمع فتیۃ المرأۃ الشابۃ ومفہومۃ جوازہ علی العجوزبل صرحوابجوازمصافتحتہاعندامن الشہوۃ (۱ص۶۱۶)۔
وفیہ ایضاً: (ویردّ السلام علیہاوالالا) واذاسلمت سلمت المرأۃ الاجنبیۃ علی رجل ان کانت عجوزاردالرجل علیہاالسلام بلسانہ بصوت تسمع وان کانت شابۃ ردعلیہافی نفسہٖ وکذاالرجل اذاسلم علی امرأۃ اجنبیۃ فالجواب فیہ علی العکس (۶/۳۶۹)
وفی الھندیۃ: ان کانت لاتشتہی لابأس بمصافحتہاومس یدہاکذافی الذخیرۃ وفیہ ایضاً وکذالک اذاکان شیخایأمن علی نفسہ وعلیہافلابأس بان یصافحہاوان کان لایٔامن علی نفسہ ولیحافلیجتنب (۵/۳۲۹)
وفی الخلاصۃ: فان المرأۃ الاجنبیۃ اذاسلمت علی الرجل ان کانت عجوزاً ردالرجل علیہاالسلام بلسانہ بصوت تسمع وان کانت شابۃ ردّ علیہافی نفسہ وکذاالرجل اذاسلم علی امرأۃ اجنبیۃ والجواب فیہ یکون علی العکس (۴/۳۳۴) واللّٰہ اعلم بالصواب۔


Fatwa No. fno27.426

View Original Fatwa | Download Original Fatwa

comments powered by Disqus

Go to top
JSN Boot template designed by JoomlaShine.com