Raiwind Jor 2015 Bayans Listen & Download

Arrow up
Arrow down

+

20 - جنوری - 2018
۲ - جمادى الأولى - ۱۴۳۹

سوال

کیانیندآورگولیوں کااستعمال صحیح ہے۔


جواب:

ایسی دوائیاں جنکے استعمال سے نیندآتی ہے اس میں عام طورپرافیون شامل ہوتی ہے اورچونکہ بقدرضرورت دوائی کے طورپرافیون کااستعمال حرام نہیں لہٰذاایسی گولیاں جن میں افیون شامل ہواورنشہ پیدانہ ہوان کے استعمال کی دواکے طورپرگنجائش ہے۔ (مَأخذُہٗ رجسٹرنقل فتاوی ۲۰/۴۹)


حوالہ:

فی الشامیۃ (/۴۵۷ج۶) یدل علیہ مافی غایۃ البیان عن شرح شیخ الاسلام أکل قلیل السقمونیاوالبنج مباح للتداوی ومازادعلی ذلک اذاکان یقتل اویذہب العقل حرام۔
فی تنویرالابصار(۴۵۷،/۵۸ج۲): ویحرم اکل البنج والحشیشۃ والأفیون لکن دون حرمۃ الخمرفان اکل شیئامن ذلک لاحدعلیہ وان سکربل یعذربمادون الحدّ۔
فی الشامیۃ (۲ج۳۵۷) (ویحرم اکل البنج) …… وفی القھستانی: ھواحدنوعی شجرالقنب حرام لأنہ یزیل العقل وعلیہ الفتوی بخلاف نوع اخرمنہ فانہ مباح کالأفیون لانہ وان اختل العقل بہ لایزول وعلیہ مافی الہدایۃ وغیرہامن اباحۃ البنج کمافی شرح الباب اقول: ہذاغیرظاہرلان مایخل العقل لایجوزأیضابلاشبہۃ فکیف یقال مباح بل الصواب ان مرادصاحب الہدایۃ وغیرہ اباحۃ قلیلہ للتداوی ونحوہ ومن صرح بحرمتہ أرادبہ القدرالمسکرمنہ یدل علیہ مافی غایۃ البیان الخ …… (الٰی قولہ) فہذاصریح فیماقلناہ مؤیدلماسبق بحثناہ من تخصیص مامرّ من أن مااسکرکثیرہ حرم قلیلہ بالمائعات وھکذایقول فی غیرہ من الاشیاء الجامدۃ المضرۃ فی العقل اوغیرہ یحرم تناول القدرالمضرمنہادون القلیل النافع لأن حرمتہالیست لعینہابل لضررہاالخ (واللہ اعلم بالصواب)

comments powered by Disqus
Go to top
JSN Boot template designed by JoomlaShine.com